Umang is a digital humanities platform dedicated to poetic knowledge
 


 
 
Visit us on:











 















 


 
Are you a poet, writer, artist or translator? We would love to receive your work for consideration
 
News and Updates

This issue is born of heart-break. It is devoted to the memory of Sabeen Mahmud (1975-2015), who was assassinated on April 24th 2015 moments after she hosted a panel on human rights abuses in Balochistan at her cafe-center, T2F. Sabeen lived her purpose, and that of others too - and what else is true beauty? She was our beautiful, loving light

Poetic expression was one amongst many causes that Sabeen embraced and supported at her cafe. She was a loving nurturer of Umang - she encouraged us at our launch, included us in her Creative Karachi Festival, and provided her space for selling our notebooks. We offer this issue in a spirit of celebratory mourning. The more heart-broken we are, the more important it is to keep our umang alive. 

We asked the Karachi-based poet Fahmida Riaz and the New York-based poet Hasan Mujtaba to share their poems in honor of Sabeen. Alongside, we are also releasing a folk song by Mai Dhai which was already scheduled to be released - we think it matches Sabeen's spirit of joyful love.  

Hasan Mujtaba's poetry collection 'Koel Shehr ki Katha' (Tale of Cuckoo City) was scheduled to be launched at T2F on April 26th, but the event had to be postponed due to Sabeen's assassination. On June 13th, Umangpoetry organized Hasan Mujtaba's book launch in New York where Mujtaba was in conversation with Manan Ahmed, a historian of South Asia at Columbia University. The launch was organized to honor Sabeen Mahmud and her work, and also as a solidarity event with Unsilence Pakistan: Concerned Citizens for Peace who had organized a gathering in memory of Sabeen on the same day in Karachi. 

hasan 1 2

Pictures of the event are available here: 
Launch of 'Koel Shehr ki Katha' (Tale of Cuckoo City)

 

تازه تازه

 

یہ شمارہ  خون دل کے ساتھ لکھا گیا ہے کہ اس کا انتساب سبین محمود (1975-2015) کے نام ہے جسے چوبیس اپریل دو ہزار پندرہ  کی شام  اسکے قائم کیے گۓ  کیفے دی سیکنڈ فلور یا ٹی 2 ایف میں بلوچستان میں انسانی حقوق کے موضوع پر ایک سیمینار کی  اسکی میزبانی کرنے کے بعد قتل کردیا گیا۔ سبین ایک مقصد کے ساتھ زندہ رہی ، اور لوگوں کیلیے۔ اسکے علاوہ حسن حقیقی کیا ہے؟ وہ ہماری حسین اور محبت سےمعمور روشنی تھی۔

شاعری کا اظہار بہت سے مقاصد میں سے ایک تھا جنکا علم سبین نے بلند کیا ہوا تھا اور جن آدرشوں کی اپنے کیفے میں مدد و حمایت کو  ہروقت سرگردان رہا کرتی ۔ وہ "امنگ" کی بھی بہت پیار بھری پرورش کردہ تھی۔ اس نے امنگ کے مہورت میں ہماری ہمت افزائی کی تھی ، ہمیں اپنے تخلیقی کراچی میلے میں شامل کیا تھا، ہمیں اپنی نوٹ بوک فروخت کرنے کو اپنے کیفے میں جگہ میسر کی تھی۔ ہم امنگ کا  یہ شمارہ سبین کی محبت بھری خوبصورت یادوں سے لبریز دکھ کے نام منسوب کرتے ہوئے یہاں پیش کر رہے ہیں۔ کہ ہم اسوقت کتنے بھی الم نصیب و جگر فگار سہی اتنی اہمیت اس بات کی بنتی ہے کہ امنگ کو زندہ رکھا جائے۔

ہم نےکراچی میں رہنے والی شاعرہ فہمیدہ ریاض اور نیویارک میں بسنے والے شاعر حسن مجتبی'  سے کہا کہ وہ سبین کے اعزاز یا خراج تحسین میں لکھی ہوئی اپنی نظمیں ہم سے بانٹیں۔ اسی کے ساتھ  ہم تھر کی لوک فنکارہ مائی دھائ کا ایک لوک گیت بھی یہاں پیش کر رہے ہیں کیونکہ ہم سمجھتے ہہیں کہ ایسا لوک گیت بھی ہماری سبین سے محبت کی ترجمانی  کرتا ہے۔

حسن مجتبی' کے تازہ شعری مجموعے "کوئل شہر کی کتھا" کی رونمائی چھبیس اپریل کو ٹی ٹو ایف میں منعقد ہونا تھی  لیکن وہ تقریب سبین کے دکھدائک قتل کی وجہ سے ملتوی ہونا پڑی۔  تیرہ جون  کو امنگ پوئٹری نے نیویارک میں حسن مجبتی کی کتاب کی رونمائ کی تقریب کا انقعاد کیا جس میں حسن مجتبی کولمبیا یونیورسٹی میں جنوبی ایشیا پر تاریخدان منان احمد سے شریک گفتگو رہے۔ اس تقریب رونمائی کے انعقاد و میزبانی کا مقصد سبین محمود اور اسکی جدوجہد کو خراج تحسین پیش کرنے اور اس دن کراچی میں اسکی یاد میں "کنسرنڈ سٹیزنس" کی طرف سے منعقد کیے جانیوالے اجتماع "انسائلینسنگ پاکستانیا "بول کہ لب آزاد ہیں تیرے" سے اظہار یکجہتی کرنا تھا۔ کتاب کی تقریب رونمائی کی تصاویر یہاں موجود ہیں

 



Poetry منکہت
'Dawn Carnage'
Fahmida Riaz
              

'قتلِ سحر'
  فہمیدہ ریاض

 
Fahmida

Fahmida Riaz mourns a murder in her elegy even as she hold's hope's torch high.

 فہیدہ ریاض کے تحریر کردہ اس مرثیے میں غم کا علم اونچا اور گہرا ہے لیکن پھر بھی امید کی روشنی کا سورج  بڑےآب و تاب سے چمکتا ہے ۔
 

Read more  مزید پڑھیے

  
'Roshi'
Mai Dhai
'روشی'
مائی دھائی 
 
 
Mai Dhai

In this song, Mai Dhai is accompanied by her son Muharram Faqeer, singing with pure love a wedding song for a darling daughter.
 
  اس وڈیو میں مائی دھائی اپنے بیٹےمحرم فقیر کے ہمراہ اپنے مخصوص محبت بھرے انداز میں ایک پیاری بیٹی کیلیے شادی کا گیت گا رہی ہیں۔
 

Read more  مزید پڑھیے

 

'Speak, for your lips are not free'
Hasan Mujtaba 
'بول کہ لب آزاد نہیں ہیں'
'حسن مجتبی
 
Hasan

 

The New York-based exiled poet Hasan Mujtaba responds to Sabeen Mahmud's assasination with a play on Faiz's celebrated poem 'Bol ke lab azad hain teray' (Speak, for your lips are free). He points to the silencing violence all around, and urges us to speak the truth - of boots, bodies, and Balochistan - precisely because our lips are no longer free. 

نيويارک میں بسنے والے جلاوطن شاعر حسن مجتبی' نے سبين محمود کے قتل پر اپنے ردعمل میں فيض کی نظم "بول کہ لب آزاد ہیں تيرے" کی زمين میں ليکن اسکے برعکس سبين کے نام اپنی نظم کرتے ہوئے اسے"بول کہ لب آزاد نہیں" کی طور کہا ہے۔ حسن  پاکستان میں ہر طرف تشدد پر خاموشی کو ديکھتے اور لاشیں گرائی جانی ديکھ کر ہم سب کو یہ خاموشی توڑنے کو کہتے ہیں۔ کہ بولو کہ آوازیں آزاد نہیں رہیں۔  

 

Read more  مزید پڑھیے

 


to receive our monthly poemletter, write 'y' and send to:        

 info@umangpoetry.org

base test




Click to view this email in a browser

If you no longer wish to receive these emails, please reply to this message with "Unsubscribe" in the subject line or simply click on the following link: Unsubscribe

Click here to forward this email to a friend

Umang Poetry
www.umangpoetry.org
Karachi, Sindh 75500
Pakistan

Read the VerticalResponse marketing policy.

Try Email Marketing with VerticalResponse!